Exodus 8 Urdu

From Textus Receptus

Jump to: navigation, search
8 خرُوج

۱

پھِر خُداوند نے مُؔوسیٰ سے کہا کہ فِؔرعون کے پاس جا اور اُس سے کہہ خُداوند یُوں فرماتا ہے کہ میرے لوگوں کو جانے دے تاکہ وہ میری عِبادت کریں۔

۲

اور اگر تُو اُن کو جانے نہ دے گا تو دیکھ مَیں تیرے مُلک کو مینڈکوں سے مارُونگا۔

۳

اور دریا بےشُمار مینڈکوں سے بھر جائے گا اور وہ آ کر تیرے گھر میں اور تیری آرام گاہ میں اور تیرے پلنگ پر اور تیرے مُلازموں کے گھروں میں اور تیری رعیّت پر اور تیرے تنوروں اور آٹا گوندھنے کے لگنوں میں گُھستے پھِرینگے۔

۴

اور تُجھ پر اور تیری رعیّت اور تیرے نوکروں پر چڑھ جائینگے۔

۵

اور خُداوند نے مُؔوسیٰ کو فرمایا کہ ہارُؔون سے کہہ اپنی لاٹھی لے کر اپنا ہاتھ دریاؤں اور نہروں اور جھِیلوں پر بڑھا اور مینڈکوں کو مُلکِ مِصؔر پر چڑھا لا۔

۶

چنانچہ جِتنا پانی مِصؔر میں تھا اُس پر ہارُؔون نے اپنا ہاتھ بڑھایا اور مینڈک چڑھ آئے اور مُلکِ مِصؔر کو ڈھانک لِیا۔

۷

اور جادُوگروں نے بھی اپنے جادُو سے اَیسا ہی کِیا اور مُلکِ مِصؔر پر مینڈک چڑھا لائے۔

۸

تب فِؔرعون نے مُؔوسیٰ اور ہارُؔون کو بُلوا کر کہا کہ خُداوند سے شفاعت کرو کہ مینڈکوں کو مُجھ سے اور میری رعیّت سے دفع کرے اور مَیں اُن لوگوں کو جانے دُونگا تاکہ وہ خُداوند کے لئِے قُربانی کریں۔

۹

مُؔوسیٰ نے فِؔرعون سے کہا تُجھے مُجھ پر یہی فخر رہے! مَیں تیرے اور تیرے نوکروں اور تیری رعیّت کے واسطے کب کے لئِے شفاعت کروں کہ مینڈک تُجھ سے اور تیرے گھروں سے دفع ہوں اور دریا ہی میں رہیں۔

۱۰

اُس نے کہا کل کے لئِے۔ تب اُس نے کہا تیرے ہی کہنے کے مُطابِق ہوگا تا کہ تُو جانے کہ خُداوند ہمارے خُدا کی مانِند کوئی نہیں۔

۱۱

اور مینڈک تُجھ سے اور تیرے گھروں سے اور تیرے نوکروں سے اور تیری رعیّت سے دُور ہو کر دریا ہی میں رہا کریں گے۔

۱۲

پھِر مُؔوسیٰ اور ہارُؔون فِؔرعون کے پاس سے نِکل کر چلے گئے اور مُؔوسیٰ نے خُداوند سے مینڈکوں کے بارے میں جو اُس نے فِؔرعون پر بھیجے تھے فِریاد کی۔

۱۳

اور خُداوند نے مُؔوسیٰ کی درخواست کے مُوافِق کِیا اور سب گھروں اور صحنوں اور کھیتوں کے مینڈک مر گئے۔

۱۴

اور لوگوں نے اُن کو جمع کر کر کے اُن کے ڈھیر لگا دِئے اور زمین سے بدبُو آنے لگی۔

۱۵

پر جب فِؔرعون نے دیکھا کہ چُھٹکارا مِل گیا تو اُس نے اپنا دِل سخت کر لِیا اور جَیسا خُداوند نے کہہ دِیا تھا اُن کی نہ سُنی۔

۱۶

تب خُداوند نے مُؔوسیٰ سے کہا ہارُؔون سے کہہ اپنی لاٹھی بڑھا کر زمین کی گرد کو مار تاکہ وہ تمام مُلکِ مِصؔر میں جُوئیں بن جائے۔

۱۷

اُنہوں نے اَیسا ہی کِیا اور ہارُؔون نے اپنی لاٹھی لے کر اپنا ہاتھ بڑھایا اور زمین کی گرد کو مارا اور اِنسان اور حَیوان پر جُوئیں ہوگئیں اور تمام مُلکِ مِصؔر میں زمین کی ساری گرد جُوئیں بن گئی۔

۱۸

اور جادُوگروں نے کوشش کی کہ اپنے جادُو سے جُوئیں پیدا کریں پر نہ کر سکے اور اِنسان اور حَیوان دونوں پر جُوئیں چڑھی رہیں۔

۱۹

تب جادُوگروں نے فِؔرعون سے کہا کہ یہ خُدا کا کام ہے پر فِؔرعون کا دِل سخت ہو گیا اور جَیسا خُداوند نے کہہ دِیا تھا اُس نے اُن کی نہ سُنی۔

۲۰

تب خُداوند نے مُؔوسیٰ سے کہا صُبح سویرے اُٹھ کر فِؔرعون کے آگے جا کھڑا ہونا۔ وہ دریا پر آئے گا۔ سو تُو اُس سے کہنا خُداوند یُوں فرماتا ہے کہ میرے لوگوں کو جانے دے کہ وہ میری عِبادت کریں۔

۲۱

ورنہ اگر تُو اُن کو جانے نہ دے گا تو دیکھ مَیں تُجھ پر اور تیرے نوکروں اور تیری رعیّت پر اور تیرے گھروں میں مچّھروں کے غول کے غول بھیجونگا اور مِصریوں کے گھر اور تمام زمین جہاں جہاں وہ ہیں مچّھروں کے غولوں سے بھر جائیگی۔

۲۲

اور مَیں اُس دِن جشؔن کے علاقہ کو جِس میں میرے لوگ رہتے ہیں جُدا کرونگا اور اُس میں مچّھروں کے غول نہ ہونگے تاکہ تُو جان لے کہ دُنیا میں خُداوند مَیں ہی ہُوں۔

۲۳

اور مَیں اپنے لوگوں اور تیرے لوگوں میں فرق کرونگا اور کل تک یہ نِشان ظہور میں آئے گا۔

۲۴

چنانچہ خُداوند نے اَیسا ہی کِیا اور فؔرعون کے گھر اور اُس کے نوکروں کے گھروں اور سارے مُلکِ مِصؔر میں مچّھروں کے غول کے غول بھر گئے اور اِن مچّھروں کے غولوں کے سبب سے مُلک کا ناس ہو گیا۔

۲۵

تب فِؔرعون نے مُؔوسیٰ اور ہارُؔون کو بُلوا کر کہا کہ تُم جاؤ اور اپنے خُدا کے لئِے اِسی مُلک میں قُربانی کرو۔

۲۶

مُؔوسیٰ نے کہا اَیسا کرنا مُناسِب نہیں کیونکہ ہم خُداوند اپنے خُدا کے لئِے اُس چِیز کی قُربانی کریں گے جس سے مِصری نفرت کرتے ہیں۔ سو اگر ہم مِصریوں کی آنکھوں کے آگے اُس چِیز کی قُربانی کریں جِس سے وہ نفرت رکھتے ہیں تو کیا وہ ہم کو سنگسار نہ کر ڈالینگے؟۔

۲۷

پس ہم تین دِن کی راہ بیابان میں جا کر خُداوند اپنے خُدا کے لئِے جَیسا وہ ہم کو حُکم دے گا قُربانی کریں گے۔

۲۸

فِؔرعون نے کہا مَیں تُم کو جانے دُونگا تا کہ تُم خُداوند اپنے خُدا کے لئِے بیابان میں قُربانی کرو لیکن تُم بُہت دُور مت جانا اور میرے لئِے شفاعت کرنا۔

۲۹

مُؔوسیٰ نے کہا دیکھ مَیں تیرے پاس سے جاکر خُداوند سے شفاعت کرونگا کہ مچّھروں کے غول فِؔرعون اور اُس کے نوکروں اور اُس کی رعیّت کے پاس سے کل ہی دُور ہو جائیں فقط اتنا ہو کہ فؔرعون آگے کو دُعا کر کے لوگوں کو خُداوند کے لئِے قُربانی کرنے کو جانے دینے سے اِنکار نہ کر دے۔

۳۰

اور مُؔوسیٰ نے فِؔرعون کے پاس جا کر خُداوند سے شفاعت کی۔

۳۱

خُداوند نے مُؔوسیٰ کی درخواست کے مُوافِق کِیا اور اُس نے مچّھروں کے غولوں کو فؔرعون اور اُس کے نوکروں اور اُس کی رعیّت کے پاس سے دُور کر دِیا یہاں تک کہ ایک بھی باقی نہ رہا۔

۳۲

پر فؔرعون نے اِس بار بھی اپنا دِل سخت کر لِیا اور اُن لوگوں کو جانے نہ دِیا۔

Views
Personal tools
Navigation
Toolbox