2 Samuel 3 Urdu

From Textus Receptus

Jump to: navigation, search
3 سموئیل-۲

۱

الغرض ساؤُؔل کے گھرانے اور داؤُؔد کے گھرانے میں مُدّت تک جنگ رہی اور داؤُؔد روز بروز زور آور ہوتا گیا اور ساؤُؔل کا خاندان کمزور ہوتا گیا۔

۲

اور حبرُؔون میں داؤُؔد کے ہاں بیٹے پَیدا ہُوئے۔ امنُؔون اُسکا پہلوٹھا تھا جو یزرعیلی اخِؔینوعم کے بطن سے تھا۔

۳

اور دوُسرا کِلیاؔب تھا جو کرمِلی ناباؔل کی بِیوی ابیِجؔیل سے ہُئوا۔ تِیسرا ابی سلؔوم تھا جو جسُؔور کے بادشاہ تلؔمی کی بیٹی معؔکہ سے ہُئوا۔

۴

چَوتھا ادونیاؔہ تھا جو حجیّؔت کا بیٹا تھا اور پانچواں سفؔطیاہ جو ابیطؔال کا بیٹا تھا۔

۵

اور چھٹا اِتؔرِعام تھا جو داؤُؔد کی بِیوی عِجلاؔہ سے ہُئوا۔ یہ داؤُؔد کے ہاں حبرُؔون میں پَیدا ہُوئے۔

۶

اور جب ساؤُؔل کے گھرانے اور داؤُؔد کے گھرانے میں جنگ ہو رہی تھی تو ابنؔیر نے ساؤُؔل کے گھرانے میں خُوب زور پَیدا کر لِیا۔

۷

اور ساؤُؔل کی ایک حرم تھی جِسکا نام رِصفاؔہ تھا۔ وہ ایّاؔہ کی بیٹی تھی۔ سو اِشؔبوست نے ابنؔیر سے کہا تُو میرے باپ کی حرم کے پاس کیوں گیا؟۔

۸

ابنؔیر اِشؔبوست کی اِن باتوں سے بُہت غُصّہ ہو کر کہنے لگا کیا مَیں یہُؔوداہ کے کِسی کُتّے کا سر ہُوں؟ آج تک مَیں تیرے باپ ساؤُؔل کے گھرانے اور اُسکے بھائِیوں اور دوستوں سے مِہربانی سے پیش آتا رہا ہُوں اور تُجھے داؤُؔد کے حوالہ نہیں کِیا تَو بھی تُو آج اِس عَورت کے ساتھ مُجھ پر عَیب لگاتا ہے؟۔

۹

خُدا ابنؔیر سے وَیسا ہی بلکہ اُس سے زِیادہ کرے اگر مَیں داؤُؔد سے وُہی سلُوک نہ کرُوں جِسکی قَسم خُداوند نے اُسکے ساتھ کھائی تھی۔

۱۰

تاکہ سلطنت کو ساؤُؔل کے گھرانے سے مُنتقِل کر کے داؤُؔد کے تخت کو اِسرائؔیل اور یہُؔوداہ دونوں پر داؔن سے بیؔرسبع تک قائِم کرُوں۔

۱۱

اور وہ ابنؔیر کو ایک لفظ جواب نہ دے سکا اِسلئِے کہ اُس سے ڈرتا تھا۔

۱۲

اور ابنؔیر نے اپنی طرف سے داؤُؔد کے پاس قاصِد روانہ کئِے اور کہلا بھیجا کہ مُلک کِس کا ہے؟ تُو میرے ساتھ اپنا عہد باندھ اور دیکھ میرا ہاتھ تیرے ساتھ ہوگا تا کہ سارے اِسرائؔیل کو تیری طرف مائِل کرُوں۔

۱۳

اُس نے کہا اچھّا مَیں تیرے ساتھ عہد باندُھونگا پر مَیں تُجھ سے ایک بات چاہتا ہُوں اور وہ یہ ہے کہ جب تُو مُجھ سے مِلنے کو آئے تو جب تک ساؤُؔل کی بیٹی مؔیِکل کو پہلے اپنے ساتھ نہ لائے تُو میرا مُنہ دیکھنے نہیں پائیگا۔

۱۴

اور داؤُؔد نے ساؤُؔل کے بیٹے اِشؔبوست کو قاصِدوں کی معرِفت کہلا بھیجا کہ میری بِیوی مؔیِکل کو جِسکو مَیں نے فِلسِتیوں کی سَو کھلڑِیاں دیکر بیاہا تھا میرے حوالہ کر۔

۱۵

سو اِشؔبوست نے لوگ بھیجکر اُسے اُسکے شَوہر لؔیَس کے بیٹے فلؔطی ایل سے چھِین لِیا۔

۱۶

اور اُسکا شَوہر اُسکے ساتھ چلا اور اُسکے پِیچھے پِیچھے بحؔورِیم تک روتا ہُئوا چلا آیا۔ تب ابنؔیر نے اُس سے کہا لَوٹ جا۔ سو وہ لَوٹ گیا۔

۱۷

اور ابنؔیر نے اِسرائیلی بزُرگوں کے پاس خبر بھیجی کہ گُذرے دِنوں میں تُم یہ چاہتے تھے کہ داؤُؔد تُم پر بادشاہ ہو۔

۱۸

پس اب اَیسا کر لو کیونکہ خُداوند نے داؤُؔد کے حق میں فرمایا ہے کہ مَیں اپنے بندہ داؤُؔد کی معرِفت اپنی قَوم اِسرائؔیل کو فِلسِتیوں اور اُنکے سب دُشمنوں کے ہاتھ سے رہائی دُونگا۔

۱۹

اور ابنؔیر نے بنی بِنیمِین سے بھی باتیں کِیں اور ابنؔیر چلا کہ جو کُچھ اِسرائیلِیوں اور بِنیمِؔین کے سارے گھرانے کو اچھّا لگا اُسے حبرُؔون میں داؤُؔد کو کہہ سُنائے۔

۲۰

سو ابنؔیر حبرُؔون میں داؤُؔد کے پاس آیا اور بِیس آدمی اُسکے ساتھ تھے۔ تب داؤُؔد نے ابنؔیر اور اُن لوگوں کو جو اُسکے ساتھ تھے ضِیافت کی۔

۲۱

اور ابنؔیرنے داؤُؔد سے کہا اب مَیں اُٹھ کر جاؤُنگا اور سارے اِسرائؔیل کو اپنے مالِک بادشاہ کے پاس اِکٹّھا کرُونگا تا کہ وہ تُجھ سے عہد باندھیں اور تُو جِس جِس پر تیرا جی چاہے سلطنت کرے۔ سو داؤُؔد نے ابنؔیر کو رُخصت کِیا اور وہ سلامت چلا گیا۔

۲۲

داؤُؔد کے لوگ اور یوآؔب کِسی دھاوے سے لُوٹ کا بُہت سا مال اپنے ساتھ لیکر آئے لیکن ابنؔیر حبرُؔون میں داؤُؔد کے پاس نہیں تھا کیونکہ اُس نے اُسے رُخصت کر دِیا تھا اور وہ سلامت چلا گیا تھا۔

۲۳

اور جب یوآؔب اور لشکر کے سب لوگ جو اُسکے ساتھ تھے آئے تو اُنہوں نے یوآؔب کو بتایا کہ نیؔر کا بیٹا ابنؔیر بادشاہ کے پاس آیا تھا اور اُس نے اُسے رُخصت کر دِیا اور وہ سلامت چلا گیا۔

۲۴

تب یؔوآب بادشاہ کے پاس آ کر کہنے لگا یہ تُو نے کیا کِیا؟ دیکھ! ابنؔیر تیرے پاس آیا تھا سو تُو نے اُسے کیوں رُخصت کر دِیا کہ وہ نِکل گیا؟۔

۲۵

تُو نؔیر کے بیٹے ابنؔیر کو جانتا ہے کہ وہ تُجھ کو دھوکا دینے اور تیرے آنے جانے اور تیرے سارے کام کا بھید لینے آیا تھا۔

۲۶

جب یوآؔب داؤُؔد کے پاس سے باہر نِکلا تو اُس نے ابنؔیر کے پِیچھے قاصِد بھیجے اور وہ اُسکو سِؔیرہ کے کنُوئیں سے لَوٹا لے آئے پر یہ داؤُؔد کو معلُوم نہیں تھا۔

۲۷

جب ابنؔیر حبرُؔون میں لَوٹ آیا تو یوآؔب اُسے الگ پھاٹک کے اندر لے گیا تا کہ اُسکے ساتھ چُپکے چُپکے بات کرے اور وہاں اپنے بھائی عساؔہیل کے خُون کے بدلہ میں اُسکے پیٹ میں اَیسا مارا کہ وہ مَر گیا۔

۲۸

بعد میں جب داؤُؔد نے یہ سُنا تو کہا کہ مَیں اور میری سلطنت دونوں ہمیشہ تک خُداوند کے آگے نؔیر کے بیٹے ابنؔیر کے خُون کی طرف سے بے گُناہ ہیں۔

۲۹

وہ یؔوآب اور اُسکے باپ کے سارے گھرانے کے سر لگے اور یؔوآب کے گھرانے میں کوئی نہ کوئی اَیسا ہوتا رہے جِسے جریان ہو یا جو کوڑھی ہو یا بیَساکھی پر چلے یا تلوار سے مَرے یا ٹُکڑے ٹُکڑے کو مُحتاج ہو۔

۳۰

سو یؔوآب اور اُسکے بھائی ابِیشؔے نے ابنؔیر کو مار دِیا اِسلئِے کہ اُس نے جِبعُؔون میں اُنکے بھائی عساؔہیل کو لڑائی میں قتل کِیا تھا۔

۳۱

اور داؤُؔد نے یؔوآب سے اور اُن سب لوگوں سے جو اُسکے ساتھ تھے کہا کہ اپنے کپڑے پھاڑو اور ٹاٹ پہنو اور ابنؔیر کے آگے آگے ماتم کرو اور داؤُؔد بادشاہ آپ جنازہ کے پِیچھے پِیچھے چلا۔

۳۲

اور اُنہوں نے ابنؔیر کو حبرُؔون میں دفن کِیا اور بادشاہ ابنؔیر کی قبر پر چِلّا چِلّا کر رویا اور سب لوگ بھی روئے۔

۳۳

اور بادشاہ نے ابنؔیر پر یہ مرثِیہ کہا۔ کیا ابنؔیر کو اَیسا ہی مَرنا تھا جَیسے احمق مَرتا ہے؟۔

۳۴

تیرے ہاتھ بندھے نہ تھے اور نہ تیرے پاؤں بیڑیوں میں تھے۔ جَیسے کوئی بدکاروں کے ہاتھ سے مَرتا ہے وَیسے ہی تُو مرا گیا۔ تب اُس پر سب لوگ دوبارہ روئے۔

۳۵

اور سب لوگ کُچھ دِن رہتے داؤُؔد کو روٹی کھِلاتےآئے لیکن داؤُؔد نے قَسم کھا کر کہا اگر مَیں آفتاب کے غرُوب ہونے سے پیشتر روٹی یا اَور کُچھ چکھُّوں تو خُدا مُجھ سے اَیسا بلکہ اِس سے زِیادہ کرے۔

۳۶

اور سب لوگوں نے اِس پر غَور کِیا اور اِس سے خُوش ہُوئے کیونکہ جو کُچھ بادشاہ کرتا تھا سب لوگ اُس سے خُوش ہوتے تھے۔

۳۷

سو سب لوگوں نے اور تمام اِسرائؔیل نے اُسی دِن جان لِیا کہ نیؔر کے بیٹے ابنؔیر کا قتل ہونا بادشاہ کی طرف سے نہ تھا۔

۳۸

اور بادشاہ نے اپنے مُلازِموں سے کہا کیا تُم نہیں جانتے ہو کہ آج کے دِن ایک سرادار بلکہ ایک بُہت بڑا آدمی اِسرائؔیل میں مَرا ہے؟۔

۳۹

اور اگرچہ مَیں ممسُوح بادشاہ ہُوں تَو بھی آج کے دِن عاجِز ہُوں اور یہ لوگ بنی ضرویاہ مُجھ سے زبردست ہیں۔ خُداوند بدکار کو اُسکی بدی کے مُوافِق بدلہ دے۔

Views
Personal tools
Navigation
Toolbox